May 21, 2022

شادی اس وقت کرو جب تم یہ ایک کام مکمل کرلو، فائد ے میں رہو گے


جیسا کہ آپ کے لقب سے ظاہر ہے کہ آپ تمام ائمہ کے مقابلے میں سب سے بڑے مقام و مرتبے پر فائز ہیں۔ اسلامی فقہ میں حضرت امام اعظم ابو حنیفہ کا پایہ بہت بلند ہے۔ آپ کا اصل نام نعمان بن ثابت بن زوطا رضی اللہ عنہ ہے۔ آپ 80 ہجری بمطابق 699ء میں کوفہ میں پیدا ہوئے۔آپ نے فقہ کی تعلیم اپنے استاد حماد بن ابی سلیمان سے حاصل کی۔ آپ کے اساتذہ کا سب سے پہلا طبقہ صحابہ کرام رضی اللہ عنھم ہیں آپ اس اعتبار سے منفرد ہیں کہ آپ تابعی ہیں۔

آپ نے صحابہ کرام رضی اللہ عنھم سے علمِ حدیث حاصل کیا۔ آپ کے علاوہ امام مالک سمیت ائمہ حدیث اور ائمہ فقہ میں کوئی امام بھی تابعی نہیں آپ نے صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کی براہِ راست زیارت کی اور ان سے احادیث نبوی کا سماع کیا۔

امام اعظم نے علم حدیث کے حصول کے لئے تین مقامات کا بطورِ خاص سفر کیا۔ آپ نے علم حدیث سب سے پہلے کوفہ میں حاصل کیا کیونکہ آپ کوفہ کے رہنے والے تھے اور کوفہ علم حدیث کا بہت بڑا مرکز تھا۔ گویا آپ علم حدیث کے گھر میں پیدا ہوئے، وہیں پڑھا، کوفہ کے سب سے بڑے علم کے وارث امام اعظم خود بنے۔دوسرا مقام حرمین شریفین کا تھا۔ جہاں سے آپ نے احادیث اخذ کیں اور تیسرا مقام بصرہ تھا۔ امام ابو حنیفہ نے تقریبًا 4 ہزار اساتذہ سے علم حاصل کیا۔امام ابو حنیفہ ؒ فرماتے تھے :کہ کم ہنسا کرو، زیادہ ہنسو گے تو دل مردہ ہوجائے گا۔ بے شک میں نے علم کو حمد وشکر کے سبب ہی حاصل کیا ہے

وہ اس طرح کہ جب بھی میں کوئی علمی بات سمجھ لیتا ہوں ، اور اس کی تہہ تک پہنچ جاتا ہوں تو اس کے بعد الحمد اللہ ضرور کہتاہوں۔ میں علم دین کے لیے دو سال تک حضرت امام جعفر صادق رضی اللہ عنہ کی صحبت و با برکت میں رہا۔ اگر میری زندگی میں یہ دوسال نہ ہوتے تو نعما ن ہل اک ہوگیا ہوتا۔ ذلیل اور گھٹیا لوگوں سے دوستی کا ہاتھ مت بڑھاؤ۔ میں بخیل شخص کو عادل نہیں سمجھتا ہوں اور نہ اس کی گواہی قبول کرتا ہوں۔ کوئی شخص پریشانی میں مبتلا ہوجائے تو اس کی مدد کرو کوئی حاجت مند کسی کام آجائے تو اپنی استطاعت کے مطابق اس کا کام کرو۔ جو مصیبت لوگ تم پر نہیں ڈالتے تم کو بھی چاہیے

کہ تم ان پر کوئی مصیبت مت ڈالو۔ کوئی تمہارے بارے غلط کہے تم اسے اچھے الفاظ میں یاد کیا کرو۔ جہاں تک ممکن ہو لوگوں سے اچھے اخلاق سے پیش آتے رہو۔ بغیر عمل کے علم ایسے ہیے جیسے بغیر روح کے جسم ۔ جب تمہیں یہ یقین ہوجائے کہ میں اہل و عیال کی ذمہ داری اٹھا سکتا ہوں فوراً شادی کرلو، فائدے میں رہو گے۔ مصیبتیں گن اہوں کا نتیجہ ہوا کرتی ہیں۔ کبھی ایسی چیز کی عادت مت ڈالو جو بظاہر زیبا نہ ہو۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں