May 17, 2022

شوخ طوائف اپنےپسندیدہ مرد کے لیے یہ کرتی ہے کہ ؟؟


اردو نیوز

جس لڑکی کو ماں باپ کی عزت کی فکر وہ وہ محبت تو کیا بادشاہت بھی ٹھکرا دیتی ہے۔ رشتے دل سے بنتے ہیں باتوں سے نہیں کچھ لوگ بہت باتوں کے بعد اپنے نہیں ہوتے اور کچھ خاموش رہ کر بھی اپنے بن جاتے ہیں۔ محبت میں عورت کے قہر سے بچو۔ ہوس زدہ معاشرے میں کوئی عورت بد صورت نہیں ۔ باربار آنسو صاف کرنے کے بجائے ایک بار ہمت کرکے اپنی زندگی کو ان سے ہی صاف کردیں جو ان آنسوؤں کی وجہ بنتے ہیں۔

کچھ اذیتیں روح کے اندر پیوست ہوجاتی ہیں جو کبھی ختم نہیں ہوتی ۔ ہر دن کے ساتھ بڑھتی ہیں اور آخری سانس تک ساتھ نہیں چھوڑتیں کچھ ٹھوکریں ایسی ہوتی ہیں۔

جوانسان کی غلطی کے سبب نہیں لگتی بلکہ اس کی قسمت میں لکھی ہوتی ہیں۔ پردرد پر اذیت ، طویل اور کربناک۔ اگر مرد کی برداشت اور عورت کی زبان قا بو میں ہے تو ہر گھر امن کا گہوارہ ہے۔ محبت کا تو پتا نہیں مگر انسان نفرت دل سے کرتا ہے۔ میں عشق کے بارے سوچتا ہوں تو صر ف شہوانیت ہی نظر آتی ہے ۔

عورت کو شہوانیت سے الگ کرکے دیکھتا ہوں تو پتھر کی مورت بن جاتی ہے۔ زندگی میں تکلیف اسی کو آتی ہے۔ جو ذمہ داری اٹھانے کو تیار رہتے ہیں۔

ذمہ داری لینے والے کبھی ہارتے نہیں یا تو جیتے ہیں یا سیکھتے ہیں۔ محبت تو بارش ہے جسے چھونے کی خواہش میں ہتھلیاں گیلی تو ہوجاتی ہیں۔ مگر ہاتھ ہمیشہ خالی ہی رہتے ہیں۔ مشکل وقت میں انسان کے خود کو دیے گئے دلاسے کبھی نہیں بھولتے ۔ عورت جس عمر میں بھی ہو اس کےاندر کی شوخ طوائف اپنےپسندیدہ مرد کے لیے کبھی نہیں مرتی۔ ہرانسان کو زندگی میں ایک دفعہ محبت ضرور کرنی چاہیے ۔ یہ بہت کچھ سکھادیتی ہے۔

بشرطیکہ محبت ہو۔ عبادتوں کے انبار لگے ہوں لیکن کسی کو مشکل میں دیکھ کر دل میں احساس پیدا نہ ہو تو وہ نیکی کی روح سے خالی ہے۔

ممکن ہے عورت کی آنکھوں میں آپ آنسو ضروری خیال نہ کریں۔ پر میں آنسوؤں کو ہٹا کر عورت کی آنکھوں کا تصور ہی نہیں کرسکتا۔ آنسو آنکھوں کا پسینہ ہے۔ اور مزدور کی پیشانی صرف اسی صورت میں مزدور کو پیشانی ہوسکتی ہیں۔ جب اس پر پسینے کےقطرے چمک رہے ہوں اور عورت کی آنکھ صرف اسی صورت میں عورت کی آنکھیں ہوسکتی ہیں۔ جب وہ آنکھیں آنسوؤں سے ڈوبی رہتی ہیں۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں